سرخ-لپ-اسٹک-لگائے-ہوئے-خاتون-ٹوٹا-ہوا-آئینہ-پکڑے-ہوئے

میرا آئینہ

·

سوشل میڈیا پر شیئر کریں

۔۔۔۔۔‘میں بلا کی حسین  ہوں بس۔۔۔ ہے کوئی مجھ سا،تو سامنے آئے نا

۔۔ یہ گھنیری ریشمی زلف۔۔یہ شبنمی ہونٹ۔۔  یہ  آنکھیں شمع فروزاں سی، ہر اک نظر میں جادوگری، یہ چہرہ  چودھویں کے چاند سا۔۔۔ اور۔۔۔اور

ہمجولی! تم درمیان بولو نہیں بس سنتی جاؤ۔۔۔ ہاں بس اتنا بتادو غلط کہا’ میں نے۔۔؟

اور میری مسکراہٹ ، کیا میرےلیے شاعر نے نہیں کہاتھا؟

۔۔۔اک بار مسکرادو اک بار۔۔۔

اور میرے یہ گورے ہاتھ، مخروطی انگلیاں ۔۔ اور میرے پاؤں یوں نرم اور چمکتے ہوئے کہ جیسے تراش، تراش کے بنائے ہوں بنانے والے نے۔ میری ہمجولی! جاؤ جاؤ اپنا یہ فلسفہ ء فنا و بقا کسی اور پہ جھاڑو جا کے۔۔

______

پتا نہیں ہمجولی کیا کہتی رہتی ہے! بس اس کی پوسٹ آج آخری بار پڑھ لیتی ہوں ۔۔۔ کیا لکھا ہے ۔۔۔  لکھاکیا ہے۔۔۔

’ انسان اپنے جسم اور جسمانی اعضا پہ کچھ اختیار نہیں رکھتا۔۔۔۔ اس سے مؤاخذہ اس کے اعمال کا ہو گا جسمانی ساخت کا نہیں۔۔۔اور ۔۔۔۔ سب انسان برابر ہیں گورا، کالا، بدصورت، خوبصورت۔۔۔ کسی کو کسی پہ فوقیت نہیں سوائے تقوٰی کے۔۔۔اور ظاہری خوبصورتی تو ۔۔۔۔۔۔‘

اف۔۔۔اف۔۔۔ میری ہمجولی ! پاگل ہو تم۔ کیا مالی بابا اور اس کا سیاہ چہرے والا بیٹا میری برابری کر سکتے ہیں؟؟ ہمجولی! انصاف کی بات کہو کیا ہم تینوں ایک جیسے دکھائی دیتے ہیں؟؟  

پتہ نہیں کیسی باتیں کرتی ہے میری ہمجولی۔ لو میں فون ہی بند کر کے رکھ دیتی ہوں ۔۔

اور اب بس! میں ہوں اور میرا یہ ہرابھرا لہلہاتا۔۔۔ گنگناتا لان۔  لگتا ہے یہ پھول میرے بالوں کی تعریف کر رہے ہیں۔۔۔ ٹھنڈی تازہ ہوا مجھے چھو کے مخمور ہو گئی ہے۔۔۔

اور ۔۔۔یہ۔۔۔ یہ گیندے کاپھول تو ہے ہی میری زلفوں کے لیے۔۔۔

اور۔۔۔۔یہ۔۔۔۔ما۔۔۔ لی۔۔ بابا کا بچہ ۔۔یہ کہاں سے گھس آیا یہاں۔۔۔ جانتا بھی ہے کہ مجھے ایک آنکھ نہیں بھاتے یہ دونوں باپ بیٹا۔۔۔باپ کے ہاتھ دیکھو ذرا کھردرے کالے بھدے۔۔۔اور یہ لڑکا سیاہ صورت والا ۔۔۔۔ پہلے تو اسے یہاں سے چلتا کروں۔۔۔۔

______

"آہا۔۔۔ ہمجولی صرف فلسفے ہی نہیں بگھارتی، بڑے اچھے کام بھی کرتی ہے۔۔۔ کتنا خوبصورت نازک سا آئینہ آج میرے لیے بھیجا ہے، جانے اسے کیسے خبر ہوگئی کہ آج میں نے خاص لباس زیبِ تن کرنا ہے۔۔ تازہ بہار کے رنگوں جیسا۔۔۔ سبز، جامنی،گلابی، سرخ، سارے ہی رنگ تو ہیں اس لباس میں۔۔۔ او ہمجولی شکریہ اس تحفے کے لیے۔۔ اس سیاہ صورت والے سے کہہ کے لان میں رکھواتی ہوں اسے  کہ جہاں میں نے سیلفیاں بنانی ہیں۔۔۔

چلو جی ہمجولی کی پھر کال آگئی۔۔۔ کہیں یہ حسد تو نہیں کرتی مجھ سے۔۔۔ نہیں، نہیں دل نہیں مانتا، فلسفی ضرور ہے مگر ہے تو میری مخلص دوست۔۔۔۔کال اٹینڈ کرلیتی ہوں تحفے کاشکریہ بھی تو ادا کرنا ہے۔”

______

"ہاں! یہ بالکل صحیح کیا لڑکے تو نے  یہ آئینہ گلاب کی بیل کے ساتھ رکھ دیا۔۔ چل بھئی رشکِ چمن! غنچہ دہن! شیریں سخن! موجِ صبا کی طرح چل ، باد بہاری کی مانند ٹھہر، تتلیوں کے پیچھے بھاگ اور ہاں اک بار بس اک بار مسکرا دے ذرا کہ آج موسم کی ادائیں بڑی شوخ سی دکھائی دے رہی ہیں۔۔۔۔ پھر۔۔۔۔۔۔

ارے واہ! یہ شوخی تو مستی میں بدل رہی ہے اور یہ ہوائیں۔۔۔۔۔ یہ تو۔۔۔ لگتاہے میری دیوانی ہو رہی ہیں کبھی آئینے کو چھوتی ہیں کبھی مجھے چھیڑتی ہیں ۔۔۔۔۔

اب ان بادلوں سے کوئی پوچھے کہ ہوا کے سنگ یوں میرا لہرانا، مستی میں گنگنانا اتنا بھا گیا ان کو کہ زمیں کی طرف لڑھکتے چلے آرہے ہیں ۔ سچ یہ ہے کہ سبھی نظارے  پسینے پسینے ہوگئے ہیں مجھے دیکھ کے۔۔ آئینے کے سامنے کھڑی ہوجاتی ہوں۔۔۔ لو ہوا کو تو اب باقاعدہ  شرارت سوجھ رہی ہے۔۔۔ میرے آنچل کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کا آخر مطلب کیا ہے؟ ۔۔۔۔ اف۔۔۔ یہ ہوا تو تیز ہوگئی ہے۔۔۔۔ رکو ذرا ہولے چلو نا۔۔۔۔ ابھی تین ہی سیلفیاں بن پائی ہیں بس۔۔۔۔ بہارو اتناشور کیوں شروع کردیا۔۔۔۔ اچھا آئینے کو خود ہی تھام لیتی ہوں مضبوطی سے۔۔۔۔ اور ۔۔۔۔یہ۔۔۔۔موسم کی رنگت تو سیاہ ہوگئی۔۔۔اف۔۔۔یہ۔۔۔۔طو۔۔۔۔فان۔۔۔۔۔وہ۔۔۔وہ میری موتیے کی  بیل نیچے گر پڑی۔۔۔۔

۔۔۔پتا گرا مجھے درسِ فنا دے گیا۔۔۔

اور۔۔۔۔اور یہ۔۔۔یہ ۔۔۔۔ اللہ  کتنے تیز جھکڑ ہیں۔۔۔۔ آئینے پلیز ! تو بس کھڑے رہنا۔۔۔ ارے۔۔۔ارررررے۔۔۔۔

اف۔۔۔۔ ارے کوئی ہے۔۔۔ سنو۔۔۔کوئی ہے؟  آنا۔۔۔ذرا یہاں آنا۔۔۔  آئینے تو فکر نہ کر تجھے نہیں گرنے دوں گی۔۔۔ ارے کوئی ہے۔۔۔۔میرے پاس آؤ۔۔۔۔۔

اف۔۔۔یہ ۔۔۔۔۔اوہ۔۔۔ یہ چنبیلی کی بیل تو آئینے پہ آگری۔۔۔ آئینہ ٹوٹ گیا۔۔۔یہ کیا۔۔۔۔ میں بکھر گئ۔۔۔ یہ ٹکڑے ٹکڑے میری صورت۔۔۔ اوہ۔۔۔اوہ۔۔ یہ میری زلف ۔۔۔۔لگتا ہے بیل کے ساتھ الجھ گئ ہے۔۔۔ اف۔۔۔اف۔۔۔ارے کوئی ہے؟؟۔۔ مدد ۔۔۔مدد ۔۔۔

آہ۔۔۔ میرے ہاتھ تو زخمی ہوگئے ہیں۔۔۔ یہ انگلیاں خون میں لت پت یہ کیسے ہوئیں۔۔

’میں آگیا آگیا چھوٹی بی بی۔۔۔‘

’یہ۔۔۔مالی۔۔۔ بابا۔۔۔‘

آئینے کے ٹکڑے آپ کے ہاتھوں کو زخمی کرگئے۔ میں اسپرٹ اور پٹی لے’ آیا ہوں۔‘

’اف۔۔۔یہ کھردرے کالے بھدے ہاتھ میری پٹی کریں گے۔۔۔اف۔۔۔‘

’بی بی جی آرام سے، آرام سے، پٹی کر دیتا ہوں، اور وہ دیکھیں آپ کی سہیلی اپنی گاڑی لے کے آ پہنچی ہیں ہسپتال جانا ہو گا۔۔۔‘

‘میرے  گورے ہاتھ مخروطی انگلیاں۔۔۔’

‘مالی بابا کے کھردرے کالے ہاتھ ۔۔۔’

’میرے خوبصورت ہاتھ۔۔۔‘

’مالی۔۔۔۔ بابا۔۔۔ کے کھردرے۔۔۔۔کالے۔۔۔’

’میرے پیارے ہاتھ۔۔۔‘

’نہیں۔۔۔۔۔‘

’مالی بابا کے۔۔۔۔‘

’نہیں، نہیں، نہیں ۔۔۔اور۔۔۔۔یہ’

یہ ہمجولی چلی آرہی ہے۔۔

۔۔۔ موبائل فون پہ کیا سنتی آرہی ہے۔۔۔میں بھی سنوں بھلا ۔۔۔

یا ایھاالانسان ما غرک بربک الکریم۔۔۔۔۔۔۔۔

_____

 تیز جھکڑ  تھم گئے ۔ موسم دوبارہ اعتدال پہ آگیا۔۔۔

میں آپریشن تھیٹر میں سرجن اکرام اللہ کے رحم و کرم پہ پڑ ی تھی ۔۔۔

شیشے کے ٹکڑے دونوں ہاتھوں  میں گہرائی تک پیوست ہو گئے ہیں۔۔’ ایک ٹکڑا بائیں کلائی میں پیوست ہوا ہے ۔ پاؤں بھی زخمی ہیں ان کے۔ اب کچھ دیر تک سینئر سرجن راشد خان صاحب آجاتے ہیں، وہی دیکھیں  گے ان کا کیس۔ تب تک آپ انھیں تازہ پھل کھلائیں سوپ پلائیں انھیں۔۔‘

ایکسرے رپورٹ  ہاتھ میں پکڑے ڈاکٹرصاحب میری ہمجولی  کو بتا رہے تھے… ’کچھ دن تک یہ اپنے دونوں ہاتھ استعمال نہیں کر سکیں گی، مکمل طور dependant  ہوں گی۔۔۔‘

ڈاکٹر اکرام اللہ چلے گئے. میری ہمجولی میرے پاس بیٹھ کے میرے لیے پھل کاٹنے لگی۔۔۔

میں نے عرصے بعد اس ہمدرد انسانیت کے چہرے کو بغور دیکھا ۔اس کے جس  ڈھیلے ڈھالے گاؤن کو میں طنز سے خیمہ کہا کرتی تھی ، آج جو جی بھر کے دیکھاتو مجھ پہ کھلا اس کالے رنگ کے گاؤن نے چاند کے ٹکڑے کو اپنے اندر چھپا رکھاہے۔ اپنا آئینہ ٹوٹ گیا تو آج اس کے چہرے کو میں دیکھتی گئی، دیکھتی گئی۔  گول مٹول بھولا بھالا چہرہ کہ جسے حیا کی سرخی نے مزید حسین کردیا تھا۔ جھکی ہوئی پلکوں کی چلمن اس نے اوپر اٹھائی میری جانب مسکرا کے دیکھا مجھے نرم مہربان ہاتھوں سے سہارا دیا، بٹھایا اور کٹے ہوئے پھل کی پلیٹ میرے سامنے رکھ دی اور خود میرا دوپٹہ اور میرا بستر ٹھیک کرنے لگ گئی۔۔۔

‘ہمجولی!’ میرا بس نہیں چل رہا تھا کہ آگے بڑھوں اور اس کے روشن ۔۔۔چہرے کو چوم لوں۔

‘میں گھر نہیں جاؤں گی، تمھارے پاس ہوں سارا وقت تم بہت جلد ٹھیک ہو جاؤ گی میری پیاری دوست!۔۔۔۔’ اس نے میرا دوپٹہ اور بال ٹھیک کرتے ہوئے کہا۔

’وہ  چلا دو ۔۔۔۔وہ کلپ وہ جو اس وقت آن کیا تھا ۔۔۔‘

’اچھا اچھا۔۔۔لو۔۔۔‘

یاایھاالانسان ما غرک بربک الکریم۔ الذی خلقک فسوک فعدلک۔ فی ای صورة ما شاء رکبک۔۔۔۔

اے انسان کس چیز نے تجھے اپنے اس رب کریم کی طرف سے دھوکے میں ڈال دیا جس نے تجھے پیدا کیا، تجھے نک سک سے درست کیا، تجھے متناسب بنایا اور جس صورت میں چاہا تجھ کو جوڑ کر تیار کیا۔۔۔۔(الانفطار)


سوشل میڈیا پر شیئر کریں

زندگی پر گہرے اثرات مرتب کرنے والی تمام اہم ترین خبروں اور دلچسپ تجزیوں کی اپ ڈیٹس کے لیے واٹس ایپ پر آفیشل گروپ جوائن کریں

تبصرہ کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے